سياسيون وانتخابات، انتخبوا بحرية و شاركوا في الديمقراطية، شاركوا في التغييرعن طريق الاستفتاء عبر الانترنت
left right

السيرة الذاتية نواز شریف

> Pakistan > السياسيون > Pakistan Muslim League (N) > Nawaz Sharif
نواز شریف نواز شریف
نواز شریف
پاکستان کے موجودہ وزیر اعظم. | A Pakistani politician, the Prime Minister of Pakistan since 2013.
رئيس الوزراء
email

وصف المترشح: 

نواز شریف السيرة الذاتية

URD:

 

میاں محمد نواز شریف (ولادت: 25 دسمبر، 1949ء، لاہور) پاکستان کے سابق وزیر اعظم اور پاکستان کی دوسری بڑی سیاسی جماعت پاکستان مسلم لیگ (ن) کے قائد ہیں۔ آپ کو یہ منصب دو دفعہ نصیب ہوا وہ مياں محمد شريف (مرحوم) کے سب سے بڑے صاحبزادے ہيں، جو کہ اتفاق گروپ آف انڈسٹريز کے شريک مالکان ميں سے تھے۔

 

سیاسی تاریخ

نوازشریف کی سیاسی تربیت پاکستان کے فوجی آمر جنرل ضیاالحق کے زیر سایہ ہوئی۔ ضیاء دور میں وہ لمبے عرصے تک پنجاب حکومت میں شامل رہے۔ وہ کچھ عرصہ پنجاب کی صوبائ کونسل کا حصہ رہنے کے بعد 1981 ميں پنجاب کی صوبایی کابينہ ميں بطور وزيرِخزانہ شامل ہو گۓ۔ وہ صوبے کے سالانہ ترقياتی پروگرام ميں ديہی ترقی کے حصے کو 70% تک لانے ميں کامياب ہوۓ۔ اس کے ساتھ ساتھ وہ کھيلوں کے وزير بھی رہے اور صوبے میں کھيلوں کی سرگرميوں کی نۓ سرے سے تنظيم کی۔

 

آمریت کے زیرِ سایہ 1985 میں ہونے والے غیر جماعتی انتخابات ميں مياں نواز شریف قومی اور صوبایی اسمبليوں کی سيٹوں پہ بھاری اکثريت سے کامياب ہوۓ۔ 9اپريل 1985 کو انھوں نے پنجاب کے وزيرِاعلٰی کی حيثيت سے حلف اٹھايا۔ 31 مئی 1988ء کو جنرل ضياءالحق نے جونیجو حکومت کو برطرف کردیا تاہم مياں نواز شريف کو نگران وزیراعلٰی پنجاب کی حیثیت سے برقرار رکھا گیا۔  یہ امر نوازشریف کے جنرل ضیاء سے قریبی مراسم کی نشاندہی کرتا ہے۔ جنرل ضیاء نے ایک بار نوازشریف کو اپنی عمر لگ جانے کی بھی دعا دی۔

 

1988 میں پیپلز پارٹی کو شکست دینے کے لیے جب جنرل جیلانی نے خفیہ فنڈ استعمال کیا اور رقمیں تقسیم کیں تو نواز شریف صاحب نے بھی اس سے خوب فائدہ اٹھایا۔ انہوں نے جنرل جیلانی کے ایماء اور فراہم کردہ سرمائے سے اسلامی جمہوری اتحاد تشکیل دیا۔ اس کھلی دھاندلی کے ذریعے نواز شریف 1988ء کے انتخابات ميں دوبارہ وزيرِاعلٰی منتخِب ہوۓ۔ ان کی اس مدت ميں مّری اور کہُوٹہ ميں زبردست تّرقی ہوئی۔

 

بطور وزیر اعظم

6 نومبر 1990ء کو نواز شريف نے اس وقت بطور منتخِب وزيرِاعظم حلف اُٹھايا جب ان کی انتخابی جماعت،اسلامی جمہوری اتحاد نے اکتوبر 1990ء کے انتخابات ميں کاميابی حاصل کی۔ تاھم وہ اپنی پانچ سال کی مدت پوری نہ کر سکے اور ان کو اس وقت کے صدر نے ان کو ان کے عہدے سے فارغ کر ديا۔ اگرچہ ملک کی عدالتِ اعظمٰی نے ايک آئينی مقدمے کے بعد انھيں دوبارہ ان کے عہدے پہ بحال تو کر ديا،ليکن ان کو جولائي 1993ء ميں صدر کے ساتھ اپنے عہدے سے استعفٰی دينا پڑا۔ ان کے زمانۂ وزارتِ اعظمٰی کے دوران ، نجی شعبہ کے تعاون سے ملکی صنعت کو مضبوط بنانے کی کوششیں کی گئيں۔غازی بروتھا اور گوادر بندرگاہ جيسے منصوبے شروع کيے گۓ- سندھ کے بےزمین ہاريوں ميں زمينيں تقسیم کی گئ۔ وسطی ایشیایی مسلم ممالک سے تعلقات مستحکم کیے گۓ۔ اقتصادی تعاون تنظیم کو ترقی دی گئ۔ افغانستان کے بحران کو حل کرانے ميں مدد دی گئي اور مختلف افغان دھڑوں نے "معاہدۂ اسلام آباد" پہ دستخط کيے۔ ان کے دورِحکومت کی اہم خوبی، پریسلر ترمیم کے تحت نافذ کی گئيں امریکی پابندیوں کے باوجود معاشی ترقی کا حصول تھی۔ اکتوبر 1999ء میں نواز شریف نے اس وقت کے فوج کے سربراہ پرویز مشرف کو ہٹا کر نئے فوجی سربراہ کے کی تعیناتی کی کوشش کی۔ فوج کا کردار قومی سیاست میں کم کرنے کی یہ دیانتدانہ کوشش ان کے لیے آفت بن گئی اور ایک فوج بغاوت کے بعد ان کی حکومت کو ختم کر دیا گیا۔

 

جلاوطنی

فوج کی طرف سے ان کی حکومت ختم ہونے کے بعد ان پر مقدمہ چلا، جو "طیارہ سازش کیس" کے نام سے مشہور ہوا۔ اس میں اغوا اور قتل کے الزامات شامل تھے۔ فوج کے ساتھ ایک خفیہ معاہدے کے بعد سعودی عرب چلے گئے۔ 2006ء میں میثاق جمہوریت پر بے نظیر بھٹو سے مل کر دستخط کیے اور فوج حکومت کے خاتمے کے عزم کا اعادہ کیا۔ 23 اگست 2007ء کو عدالت عظمٰی نے شریف خاندان کی درخواست پر فیصلہ سناتے ہوئے ان کی وطن واپسی پر حکومتی اعتراض رد کرتے ہوئے پورے خاندان کو وطن واپسی کی اجازت دے دی۔

 

ذرائع

 

 

ENG: 

 

Nawaz Sharif (Urdu, Punjabi: نواز شریف; born 25 December 1949) is a Pakistani politician and industrialist who has been Prime Minister of Pakistan since 2013. Previously he served as Prime Minister for two non-consecutive terms from November 1990 to July 1993 and from February 1997 to October 1999. Sharif is the president of Pakistan Muslim League (N), which is currently Pakistan's largest political party, and has formed the government. As the owner of Ittefaq Group, a leading business conglomerate, he is also one of the country's wealthiest men. He is commonly known as the "Lion of the Punjab" or "Tiger of Pakistan."

 

Sharif rose to prominence as part of General Zia-ul-Haq's military regime in the 1980s under the wing of Governor of Punjab Ghulam Jilani Khan. He was appointed Chief Minister of Punjab by Zia in 1985. After Zia's death and Benazir Bhutto's being elected Prime Minister in 1988, Sharif emerged as opposition leader from the conservative Pakistan Muslim League. When Benazir was dismissed by President Ghulam Ishaq Khan in 1990 on corruption charges, Sharif was elected Prime Minister the same year. But relations between Sharif and Ghulam Ishaq too deteriorated, with Ghulam Ishaq attempting to dismiss Sharif on similar charges. Sharif successfully challenged the President's decision in the Supreme Court, but both men were ultimately persuaded to step down in 1993 by army chief Abdul Waheed Kakar.

 

Serving as the Leader of the Opposition during Benazir's second tenure, Sharif was re-elected Prime Minister with a historic two-thirds majority in parliament, after Benazir was again dismissed for corruption by new President Farooq Leghari. Sharif replaced Leghari with Rafiq Tarar as President, then stripped the Presidency of its powers by passing the Thirteenth Amendment. He also controversially ordered Pakistan's first nuclear tests in response to neighbouring India's second nuclear tests. When Western countries suspended foreign aid, Sharif froze the country's foreign currency reserves to prevent further capital flight, but this only worsened economic conditions.

 

With rising unemployment and record foreign debt, Sharif's second term also saw tussles with the judiciary and army. After Sharif was summoned for contempt by the Supreme Court in 1997, party workers attacked the court and Chief Justice Syed Sajjad Ali Shah. Sharif also fell out with army chief Jehangir Karamat and replaced him with Pervez Musharraf in 1998, but after Pakistan's haphazard performance in the Kargil War, relations between the two also deteriorated. When he attempted to relieve Musharraf from his command on 12 October 1999, the army instead ousted Sharif's government, exiling him to Saudi Arabia.

 

Sharif returned in 2007, and his party contested elections in 2008, forming the provincial government in Punjab under Sharif's brother Shahbaz until 2013. He successfully called for Musharraf's impeachment and the reinstatement of Chief Justice Iftikhar Muhammad Chaudhry. Between 2008 and 2013, Sharif was in opposition. In the 2013 Pakistani general election, his party achieved the largest number of votes and he formed a coalition to become the 18th Prime Minister of Pakistan, returning to the position after fourteen years, in a democratic transition, for an unprecedented third time.

 

source

September 8, 2010

updated: 2013-03-25

icon Nawaz Sharif
icon Nawaz Sharif
icon Nawaz Sharif
icon Nawaz Sharif
icon Nawaz Sharif
icon Nawaz Sharif

ElectionsMeter لا يتحمل اي مسؤولية حول محتوى الحجج و التعاليق. نرجوا منكم الاتصال بالمصدر مباشرة. كل حجة او تعليق يجب ان يحتوي على اسم الكاتب و المصدر الاصلي. يجب ان تكون لدى المستعملين دراية بحقوق الكاتب. الرجاء الاطلاع على قواعد البوابة وإذا كان النص يحتوي على خطأ ، معلومات غير صحيحة ، تريد اصلاحها ، أو حتى اردت ان تغير مضمون الحساب ، يرجى الاتصال بنا. اتصل بنا..

 
load menu